اتوار - 2 اکتوبر - 2022

افغانستان میں پائیدار امن کا فیصلہ افغانیوں نے خود کرنا ہے-وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی

( اسلام آباد ولید بن مشتاق )وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کہتے ہیں افغانستان میں پائیدار امن کا فیصلہ افغانیوں نے خود کرنا ہے۔ طالبان کی قیادت کو القاعدہ سے رابطے منقطع کرنا ہونگے۔ توقع ہے کہ افغانستان کی سرزمین کسی کے خلاف استعمال نہیں ہوگی۔ انٹرا افغان ڈائیلاگ کی میزبانی کے لیے ناروے نے حامی بھر لی ہے ۔
قطر دوحہ سے واپسی پر اسلام آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ 29 فروری دوحہ میں ایک تاریخی دن تھا، امریکا اور طالبان کے درمیان امن کی طرف پہلا ٹھوس قدم اٹھایا گیا ہے ، پاکستان کی رائے میں یہ ایک اہم پیش رفت ہے ۔ افغانستان کے عوام امن چاہتے ہیں انہوں نے بہت بربادی دیکھی ہے، افغانستان میں امن ہونے سے عوام سکھ کا سانس لیں گے تاہم پائیدار امن کا فیصلہ افغان عوام نے خود کرناہے۔ توقع ہے کہ افغانستان کی سرزمین کسی کے خلاف استعمال نہیں ہوگی جب کہ باہر کا کوئی فریق افغان حکومت پرفیصلہ مسلط نہیں کرسکتا۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ افغان قیادت نے مل بیٹھ کر اپنے مستقبل کا فیصلہ کرناہے جب کہ افغانستان کی قیادت کی اب آزمائش آئے گی۔افغان امن عمل میں پاکستان کے کردار کو سراہا گیا اور تعریف کی گئی جب کہ نقطہ چینی کرنے والے معاہدے کے وقت پاکستان کے معترف تھے۔ انہوں نے کہا کہ افغان مہاجرین کی واپسی کے لیے عالمی سطح پر توجہ اور وسائل چاہیے ہوں گے، چاہتے ہیں افغان پناہ گزین پرامن طریقے سے اپنے وطن واپس لوٹیں ۔ وزیر خارجہ نے بتایا کہ امن معاہدے سے انٹرا افغان ڈائیلاگ کا آغاز ہوگا، ناروے نے انٹرا افغان ڈائیلاگ کی میزبانی کی حامی بھری ہے۔ افغانستان میں امن ہوگا تو وہاں کے عوام سکھ کا سانس لیں گے۔ اب یہ افغان قیادت پر ہےکہ قومی مفاد میں فیصلہ کرتےہیں یا نہیں ۔

یہ بھی چیک کریں

گندم و چینی کی دستیابی اور قیمتوں کی خود نگرانی کر رہا ہوں، وزیراعظم

گندم و چینی کی دستیابی اور قیمتوں کی خود نگرانی کر رہا ہوں، وزیراعظم

اسلام آباد(یواین پی)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اس وقت تمام معاشی اعشاریے مثبت …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔