منگل - 4 اکتوبر - 2022

بھارت:نام نہاد سیکولر ازم کا بھیانک چہرہ .شہریت کے نام پر مسلمانوں پر عرصہ حیات تنگ،عالمی برادری روائتی بیانات تک محدود

دہلی:شہریت کے نام پر مسلمانؤں کی زندگی اجیرن بنا دی گئی.دوسری طرف اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل گاندھی کے نظریہ پر عمل کی ضرورت پر زور دے رہے ہیں.جیسا کہ ق (اے پی پی کے مطابق) اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹریس نے بھارت پر زور دیا ہے کہ وہ نئی دہلی میں متنازع شہریت قانون کے خلاف مسلمان مظاہرین پر تشدد کو روکنے کے لیے گاندھی کے نظریے پر عمل درآمد کرے تاکہ فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو فروغ دیا جاسکے۔ یہ بات اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کے ترجمان سٹیفن دوجارک نے نیویارک میں اقوام متحدہ کے ہیڈکوارٹر میں کہی۔ انہوں نے کہا کہ سیکرٹری جنرل نے کہا کہ اس وقت نئی دہلی کے حالات اور حقیقی معاشرتی مفاہمت کے لیے گاندھی کے نظرے کو حقیقی معنوں میں لاگو کرنے کی بہت زیادہ ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل گزشتہ چند روز سے نئی دہلی میں ہونے والے تشدد کے واقعات پر بہت افسردہ ہیں۔انہوں نے زوردیا کہ بھارت تشدد اور پابندیوں سے گریز کرے۔ اعدادوشمار کے مطابق نئی دہلی میں متنازع شہریت قانون کے خلاف مظاہروں کے دوران 38 افراد مارے گئے۔ ہندو بلوائیوں اور مظاہرین نے دہلی میں مساجد، گھروں اور مسلمانوں کے کاروباری مراکز پر حملے کیے اور انہیں نقصان پہنچایا۔بی بی سی اردو نے اس سلسلہ میں ایک ویڈیو بھی نشر کی ہے جس میں مسلمانوں کو بدترین تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے.عالمی برادری خاموش ہے.کشمیر ایشو پہ عالمی برادری کی خاموشی سے بھارت کو شہ مل گئی ہے کہ وہ اپنی من مانی کرتا رہے.بھارت کی اندھیر نگری بی.بی .سی کی ان ویڈیوز میں صاف دکھائی گئی ہے.

 

 

 

 

 

 

یہ بھی چیک کریں

کرونا میں مبتلا امریکی صدر کو ہسپتال منتقل کردیاگیا

صدارتی انتخابات سے ایک ماہ قبل کرونا بیماری میں مبتلا امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔