بدھ - 1 فروری - 2023
راجہ ممتاز حسین راٹھور حقیقتا کامیاب سیاستدان اور رحم دل حکمران تھے،جموں و کشمیر کے سابق وزیراعظم کی اکیسویں برسی کے موقع پرشوکت جاوید میر کے تاثرات 

راجہ ممتاز حسین راٹھور حقیقتا کامیاب سیاستدان اور رحم دل حکمران تھے،جموں و کشمیر کے سابق وزیراعظم کی اکیسویں برسی کے موقع پرشوکت جاوید میر کے تاثرات 

مظفرآباد:(وقار الزمان کیانی سے)آزاد جموں و کشمیر کے سابق وزیراعظم پیپلزپارٹی کے رہنما فخر کشمیر راجہ ممتاز حسین راٹھور کی اکیسویں برسی کے موقع پر اپنے تاثرات بیان کرتے ہوئے پیپلزپارٹی کے مرکزی سیکرٹری ریکارڈ شوکت جاوید میر نے کہا کہ راجہ ممتاز حسین راٹھور حقیقتا کامیاب سیاستدان اور رحم دل حکمران ہونے کے ساتھ ساتھ برادری ازم،علاقائی تعصب کی آہنی زنجیروں سے آزاد سورج کی کرنوں اور بارش کے قطروں جیسے کردار کے مالک تھے جو بادشاہ کے محل اور غریب کی جھونپڑی،مسجد اور مندر پر مساوی اثرات دکھاتے ہیں ان کے دور اقتدار میں وزیراعظم ہاؤس میں انتظام و انصرام اداروں اور محکموں کا تھا لیکن مالکیت کا بیعنامہ مفلوک الحال پسے ہوئے طبقات بے کس نادار انسانوں کے نام تھا راجہ ممتاز حسین راٹھور کی قیادت میں اپوزیشن اور حکومت کے دوران گزرنے والے کئی سال صرف میرا ہی نہیں بلکہ ہزاروں نظریاتی کارکنوں کا سرمایہ حیات ہیں۔شوکت جاوید میر نے دلوں کے حکمران راجہ ممتاز حسین راٹھور کی قیادت گزرنے والے وقت سے چند یادوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے کشمیر ہاوس میں قائد انقلاب محترمہ بے نظیر بھٹو شہید کو تاریخ میں پہلی بار گارڈ آف آنر پیش کر کے ملک بھر کی عوام دشمن طاقتوں کو وفاداری اور بہادری کا پیغام دیا پاکستان کے عام انتخابات میں محترمہ بے نظیر بھٹو شہید کی خفاظت کے لیے آزادکشمیر پولیس سے کمانڈوز کا دستہ مامور کیا۔جب خلف اٹھانے کے دو روز بعد وادئ لیپہ کا دورہ کیا اور سیلاب کی تباہ کاریوں سے متاثرہ باعزت عوام کے دکھ درد میں جا کر شریک ہوئے اور ممبر اسمبلی محمد منیر اعوان شہید اور مجھ جیسے ایک ادنٰی کارکن کو اپنے ساتھ لے کر گئے۔راجہ ممتاز حسین راٹھور نے ایوان اقتدار کے دروازے عوام پر کھولے اور سرکاری وسائل کو عوام کی جائز ضروریات کے لیے وقف کیا مظفرآباد میں آج پورے آزادکشمیر کی سب سے بڑی شاندار عیدگاہ کا سنگ بنیاد رکھا اور مہینے میں ایک بار پیدل بغیر پروٹوکول بازاروں کا دورہ کرتے اور لوگوں کے پاس خود جا کر اپنائیت کے انمول رشتوں کو وزارت عظمٰی کی چمک کے چار چاند لگاتے۔شوکت جاوید میر نے انکشاف کیا کہ جب انہوں نے حویلی اور مظفرآباد کی دونوں نشستوں پر کامیابی حاصل کی تو حویلی کی آبائی نشست چھوڑنے اور دارالحکومت کی شہری نشست رکھنے کا مطالبہ اپنے رہائش گاہ بالاپیر مجھے بلا کر میڈیا میں کرنے کی ہدایت کی جس کے بعد انہوں نے اسی مطالبے پر عمل درآمد کر کے سیاسی کارکن کو سرخرو کیا۔شوکت جاوید میر نے کہا کہ راجہ ممتاز حسین راٹھور پر انتخابات ہارنے اور ان کے نتائج کو کلعدم قرار دینے کے بعد جب برا وقت آیا تو سردار اشرف مرحوم کو چیف ایگزیکٹو بنا کر راجہ ممتاز حسین راٹھور کو گرفتار کر لیا گیا تو پارٹی کے موجودہ صدر محترم جناب چوہدری لطیف اکبر،میں خود لطیف مغل مرحوم،چوہدری گلزار مرحوم،راجہ منیر اختر مرحوم آف ڈنک کچلی،عبدالطیف قریشی اور صاحبزادہ یعقوب نیاز پورہا والے سمیت کئی کارکنوں نے سردار اشرف نگران وزیراعظم کی گاڑی کے آگے سڑک پر لیٹ کر احتجاج کیا اور انہیں ائرپورٹ سے بذریعہ جہاز اسلام آباد جانے سے روک لیا پولیس کے آنسو گیس اور لاٹھی چارج کے بعد گرفتاریاں عمل میں لائی گئی اور چوہدری لطیف اکبر صاحب کو سینٹرل جیل اور ہمیں سٹی تھانہ کی حوالات میں بند کر دیا گیا اور ایک ہفتہ کے بعد ضمانت پر رہائی ہوئی جس کے بعد سیاسی جماعتوں سے رابطے کر کے احتجاجی تحریک کے لیے قائم مقام صدر سردار محمد حسین خان،سابق خاتون اول محترمہ بیگم فرحت راٹھور نے دن رات محنت کی اگرچہ ان راتوں کے خاطر خواہ نتائج حاصل نہ ہو سکے کیونکہ راجہ ممتاز حسین راٹھور مرحوم کے اسمبلی توڑنے کے فیصلے پر ان کے نظریاتی اور ذاتی ساتھی سخت ناراضگی کے عالم میں دوری ہی نہیں قطع تعلقی اختیار کر چکے تھے۔راجہ ممتاز حسین راٹھور مرحوم سچ میں کسی دربار کے گدی نشین ہی تھے جن کے پاس اپنا پرایا،حامی مخالف کوئی بھی آتا انہیں اپنا سیاسی پیر خوشی سے مان کر جاتا ان کی حس مزاح اور بذلہ سنجیاں آج بھی سیاسی مہمان خانوں کے دسترخوانوں اور عوامی اجتماعات میں میلا لوٹنے کی ضمانت ہوتی ہے اللہ رب العزت انہیں کروٹ کروٹ جنت الفردوس میں اعلٰی مقام عطا فرمائے سرکار دو عالم کا دیدار نصیب کرے ان کے فرزند اور سیاسی پیروکار سیکرٹری جنرل پی۔پی۔پی راجہ فیصل ممتاز راٹھور اور ان کے بھائیوں مسعود ممتاز راٹھور،ہارون ممتاز راٹھور،دانیال ممتاز راٹھور اور ان کی لاڈلی بیٹیوں سمیت ان کے خاندان اور چاہنے والوں کو ان کے انسانی فلسفہ سیاست پر کاربند رہنے کی توفیق عطا فرمائے۔راجہ ممتاز حسین راٹھور کی قومی عالمی خدمات کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے ہم سابق صدر پاکستان آصف علی زرداری سیاسی امور کی چیئرپرسن محترمہ فریال تالپور،سینئر رہنما چوہدری محمد ریاض کے شکرگزار ہیں جنہوں نے فیصل ممتاز راٹھور پر دست شفقت رکھا اور حق حقدار تک پہنچانے کے لیے انصاف پسندی اور اعلی ظرفی کی شاندار روایت پروان چڑھائی۔آج کے دن ہماری پروردگار سے یہ بھی خصوصی التجا ہے کہ وہ کورونا وائرس کی وباء سے عالم انسانیت کو نجات دے اور پیارے حبیب کے صدقے سابق صدر پاکستان سید یوسف رضا گیلانی،اور پیپلزپارٹی آزادکشمیر کے ہردلعزیز رہنما قائد حزب اختلاف چوہدری محمد یٰسین،سندھ حکومت کی وزیر سیدہ شہلا رضا اور معاون خصوصی وقار مہدی، پیپلزپارٹی آزادکشمیر کے نائب صدر خواجہ طارق سعید کی اہلیہ محترمہ ڈاکٹر نوشین سمیت کورونا وائرس کے مرض میں مبتلا جملہ مریضوں کو صحت کاملہ عاجلہ عطا فرمائے۔شہید ذوالفقار علی بھٹو،شہید محترمہ بے نظیر بھٹو کی لازوال قربانیوں کو شرف قبولیت عطا فرماتے ہوئے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کو کامیابیوں و کامرانیوں سے ہمکنار کرے۔آمین

 

یہ بھی چیک کریں

پنوعاقل: سینئر وکیل ایڈووکیٹ سردار قربان کلوڑ پر ہونے والے قاتلانہ حملے کے خلاف شہید بھٹو کے کارکنان کا پریس کلب کے باہر احتجاجی مظاہرہ، نعرہ بازی

پنوعاقل: سینئر وکیل ایڈووکیٹ سردار قربان کلوڑ پر ہونے والے قاتلانہ حملے کے خلاف شہید بھٹو کے کارکنان کا پریس کلب کے باہر احتجاجی مظاہرہ، نعرہ بازی

پنوعاقل(رپورٹ پرنس امجد گھوٹو) سینئر وکیل ایڈووکیٹ سردار قربان کلوڑ پر ہونے والے قاتلانہ حملے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔