جمعرات - 2 فروری - 2023

ٹائیگر فورس کی "فورس” تحریرمحمد الیاس اعوان

ٹائیگر فورس کی "فورس”

عوام کی خدمت کے نام پر جو بھی قدم اٹھایا جاتا ہے وہ آخر عوام کے گلے ہی پڑتا ہے  ایسی ہی مثال ٹائیگر فورس کی صورت میں موجود ہے ۔

ٹائیگر فورس سول اینڈ کینٹ انتظامیہ کی معاون قوت ہے لیکن معاونت کے بجائے خود ساختہ اختیارات ترتیب دے کر عام لوگوں اور تاجروں کے لیے وبال بن رہی ہے۔ ٹائگر فورس کا مقصد موجودہ کورونا وباہ میں معاون کے طور پر ہے نہ کہ علاقے کا ڈی ایس پی بن کر مشکلات پیدا کی جائیں۔ جو لوگ اس فورس میں موجود ہیں ان کی سیکورٹی کلیرنس ہے کہ نہیں، کیا ان کا ٹریک ریکارڈ نکالا گیا کہ نہیں۔ اس حوالے سے کسی بھی سوال کا جواب نہیں مل رہا ۔ ٹائیگر فورس کا نام استعمال کرکے عوام کی رہنمائی کے بجائے علاقے کے تھانیدار بن کر گلی گلی گھوم رہےہیں۔ نوٹس لیا جائے۔ تاجر برادری جو کہ ملکی معشیت کے پہے کو رواں رکھنے میں کلیدی حیثیت رکھتی ہے اسکے تحفظات پر غور کرنے کی اشد ضرورت ہے ۔تاجر برادری کا کہنا ہے کہ ٹائیگر فورس کی فورس کو کم کیا جائے ایسا نا ہو کہ کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش آجائے،حالات پہلے ہی کشیدہ ہیں کاروبار نا ہونے کے برابر ہے۔ایسے میں اس فورس کی کی بے جا مداخلت تاجران کو عدم تحفظ کا احساس دلا رہی ہے
ٹائیگر فورس کی غیر ذمیدارانہ روئیے سے تاجر برادری نالاں۔ ممبر صوبائی اسمبلی ملک تیمور مسعود اکبر،اے سی ٹیکسلا میاں فہم خان اس شتر بےمہار فورس سے پیدا ہونے والی شکایات کا ازالہ کریں۔ ٹائیگر فورس اپنی ذمیداری سمجھیں یا ہم ان کو آگاہ کر دیتے ہیںاس فورس کے قیام کا مقصد ہنگامی حالات میں ضرورت مندوں کو خوراک، کھانا اور راشن سپلائی کرنا ہے جبکہ ذخیرہ اندوزوں کی نشاندہی کرنا بھی ان کی ذمہ داریوں میں شامل ہوگا۔
کورونا ریلیف ٹائیگر فورس میں شامل نوجوان قرنطینہ میں موجود افراد کی پہرے داری کا فرض بھی سنبھالیں گے۔ اس فورس میں صرف پی ٹی آئی سے وابستہ نوجوانوں کے شامل ہونے کی پابندی نہیں رکھی گئی ہے۔ عوامی خدمت کے جذبے سے سرشار تمام نوجوان اس میں شامل ہو سکتے ہیں ۔یہ فورس ڈپٹی کمشنرز کے ماتحت کام کرے گیارباب اختیار سے اپیل ہے کہ عوام کی خدمت کے نعرے سے وجود میں آنے والی اس ٹیم کو باقاعدہ ٹریننگ کے مرحلے سے گزار کر حاکمیت کی بجائے خدمت پر آمادہ کیا جائے۔ایسا نا ہوکہ تاجران وعوام اس نعمت  کو عذاب پر محمول کریں اور معاشرے میں تفریق او بھی واضح  ہوجائے۔قوانین انسانوں کے لئے ہوتے ہیں  انسانوں کو قوانین کی بھینٹ نا چڑھایا جائے،

یہ بھی چیک کریں

آزمائش میں کامیابی-

آزمائش میں کامیابی-محمد عرفان صدیقی

میں آدھے گھنٹے سے اس کے ڈرائنگ روم میں بیٹھا اس کا انتظار کررہا تھا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔